Nihar Muh Phalon Ko Khana Kesa Hai

پھلوں کو نہار منہ کھانے کی ممانعت - How to eat fruits properly for health benefits in Urdu.

Nihar Muh Phalon Ko Khana Kesa Hai

کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ بعض پھلوں کو نہار منہ نہیں کھانا چاہیے جیسا کہ عام ،جامن ،ناریل ،کیلا ،انگور ،ککڑی وغیرہ۔ ان پھلوں میں وہ کیا بات ہے جس کی وجہ سے نہار منہ کھانا مضر قرار دیا گیا ہے اور ایسی کیا وجوہات ہیں جو ان پھلوں کو خالی پیٹ استعمال کرنے سے منع کیا گیا ہے۔ اس امر کو سمجھنے کے لئے ایک ضروری مسئلے کی طرف توجہ کی ضرورت ہے۔ طب یونانی میں نہار منہ پانی پینا سخت ممنوع ہے اس کی وجہ یہ بتائی گئی ہے کہ اس وقت میدہ حالی ہوتا ہے اور بھوک کا غلبہ ہوتا ہے۔ ایسے وقت میں جو پانی پیا جائے گا وہ معدے میں تیزی سے سرایت کر جائے گا اور اگر اس کیفیت میں انسان مصروف نہ رہے تو اچانک خطرہ پیدا ہو سکتا ہے۔

phalo ke fayde 

اس کے علاوہ ایک عام نقصان یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اس کہ استعمال سے میدہ ،آنتیں اور پھیپھڑے کمزور ہو جاتے ہیں لیکن ان تمام نقصانات کو مدنظر رکھتے ہوئے ہم سبھی پھلوں کے بارے میں یہ رائے پیش نہیں کر سکتے۔ یہاں اس بات کا ذکر کردینا بھی ضروری معلوم ہوتا ہے کہ ان پھلوں کو تنہا کھانے کی صورت میں ہی نقصانات کا زیادہ اندیشہ ہوتا ہے۔

mufeed ghaza

اگر ان پھلوں کی تاثیر سرد یا گرم ہے تو کسی اور غذا کا ان پھلوں کے ساتھ استعمال کو مد نظر رکھ کر کیا جائے کہ گرم کو گرم تاثیر کی بجائے گرم تاثیر والے پھل کو سرد تاثیر غذا سے ملا دیا جائے تو اس کا نقصان صحت میں بدل جاتا ہے لہذا یہ کہنا مناسب ہوگا کہ کثرت کے ساتھ خالی پیٹ استعمال میں نہ لایا جائے بلکہ دن کے کسی بھی حصے میں پھلوں کو استعمال کرنا زیادہ مفید ہوتا ہے-

Read in roman Urdu / roman Hindi

Kuch logon ka kehna hai ke baz phalon ko nihar muh nahi khana chahiye jaisa ke Aam, Jamun, Nariyal, kela, Angoor, kadri wagaira. En phalon mai wo kia bat hai jis ki waja say nihar muh khana muzi-e-sehat karar diya gya hai, aur aisi kiya wajuhat hain jo in phalon ko khali pait khanay say mana kiya gya hai. Is amar ko samajhnay ke liye aik zaruri masala ki taraf tawajo ki zrurat hai. Tib-e-unani mai nihar muh pani pina sahat mamnoon hai.Is ki waja yeh batai gai hai ke us waqat maida khali hota hai aur bhukh ka ghalba hota hai. Aise waqt mai jo pani piya jaye ga wo maiday mai tezi say srayat kr jaye ga aur agar is kaifiyat mai insan masroof nah rahay tou achanak khatra paida ho sakta hai.

Is ke ilawa aik aam nuksan yeh bhi hai ke iske istemal se  maida, antain, phephray kamzor ho jatay hain laikin in tamam nuksanaat ko mad-e-nazar rakhtay huay ham sabhi phalon ke baray mai yeh raye pesh nahi kr saktay. Yahan is bat ka zikr kr daina bhi zruri maloom hota hai ke in phalon ko tanha khanay ki surat mai hi nuksanaat ka ziyada andesha hota hai. Es baat ma koi shak nahi ke phalon ke fawaid boht ziada hain magar en ka sahi estamal be boht zaroori amal ha.

Agr in phalon ki taseer sard ya garam hai tou kisi aur ghaza ka in phalon ke sath istemal ko mad-e-nazar rakh kr kiya jaye ke garam ko garam taseer ki bjaye garam taseer walay phal ko sard taseer ghaza se mila diya jaye tou iska nuksaan sehat mai badal jata hai lehaza yeh kehna munasib hoga ke kasrat ke sath phalo ko khali pait istemal mai nah laaya jaye balke din ke kisi bhi hissay mai phalon ko istemal krna ziyada mufeed hota hai.