Dil Ka Dora Ki Alamat | Heart Attack Kaise Aata Hai

Heart attack kaise aatta hai? Heart attack ki nishaniyan kia hain. Dil ka dora kaise hota ha - dil ka dora ki alamat aur ess ka ilaj janeay

Dil Ka Dora Ki Alamat | Heart Attack Kaise Aata Hai

ہارٹ اٹیک یعنی دل کا دورہ ایک ایسی تکلیف ہے جس میں انسان کو سانس لینے میں دشواری پیش آتی ہے اور اس کو سینے میں شدید درد ہوتا ہے۔ دل کے شریانوں میں خون جم جاتا ہے جس کی وجہ سے خون کو نالیوں کی بندش کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ یہ درد مزکورہ شخص کے سینے میں بائیں طرف اوپر والے حصے میں ہوتا ہے۔ دل کا دورہ عام طور پر کسی بھی طرح کی مصروفیت کے دوران ہو سکتا ہے۔

شریانوں میں خون کا لوتھڑا بن جانے کی صورت میں ہارٹ اٹیک یعنی دل کا دورہ پڑتا ہے۔ جب کوئی شخض اس تکلیف سے گزرتا ہے تو اسی وقت دورے کے دوران دل کی کمزور شریان پھٹ سکتی ہے۔نتیجتاً دیگر مادے اور کولیسٹرول خون میں شامل ہو جاتے ہیں جس کی وجہ سے اس شریان کے پھٹنے والی جگہ پر خون جمنا شروع ہو جاتا ہے جس سے خون کا دورانیہ مکمل طور پر دل کی شریانوں میں بند ہو جاتا ہے۔ ہارٹ اٹیک سے عموماً دل کے پھٹے کمزور ہو جاتے ہیں جس سے خون کا بہاؤ کافی  درجے متاثر ہوتا ہے۔

 

دل کے دورے کی علامات

.1

بائیں بازو میں شدت سے تکلیف کا ہونا۔

.2

تکلیف جبڑے میں سے ہوتی ہوئی بائیں بازو میں محسوس ہونا۔

.3

سینے میں جلن، بوجھ، گھٹن یا تنگی کا احساس ہونا۔

.4

نبض کی رفتار اچھی طرح محسوس ہونا۔

 

دل کے دورے کی تکلیف کا دورانیہ

دل کا دورہ اگر کسی شخص کو ایک دفع ہو جاۓ تو پھر اسے دوبارہ کسی بھی وقت دل کا دورہ پڑنے کا خدشہ موجود ہوتا ہے۔ اس مرض کو علاج کے ذریعے ختم کیا جا سکتا ہے۔ اکثر یہ بیماری بلکل ٹھیک بھی ہو جاتی ہے لیکن بعض اوقات علاج کے باوجود بھی اس مرض پر قابو نہیں پایا جا سکتا اور دل کے دورے جاری رہتے ہیں۔

 

heart-attack-ki-alamat-in-urdu

دل کے دورے کی وجوہات

.1

زیادہ محنت والا کام کرنے سے اس کی تکلیف ہو سکتی ہے۔

.2

شدید سردی کی وجہ سے دل کا دورہ ممکن ہوسکتا ہے۔

.3

بہت زیادہ غضہ کرنے، کوئی صدمہ اور بہت زیادہ جذباتی ہونا بھی اس کی وجوہات میں شامل ہے۔

 

گھرمیں رہ کر کیا کرسکتے ہیں

اگر دل کی تکلیف محسوس ہو رہی ہو تو فَوراً بیٹھ جانا چاہیے، کچھ ہی لمحوں کے بعد درد کی شدت میں کمی محسوس ہو گی اور آرام آ جاۓ گا۔ تکلیف میں بہت زیادہ جذباتی نہیں ہونا چاہیۓ(ہر حال میں اسے اپنی کفیت پر قابو رکھیں ورنہ اس تکلیف پر قابو پانا مشکل ہوسکتا ہے)۔ جسمانی محنت و مشقت کے دوران اگر یہ دورہ پڑ جاۓ تو اسی وقت کام کرنا بند کر دیں ورنہ زیادہ نقصان بھی ہوسکتا ہے۔ اگر گھر میں کوئی ڈاکٹر کی تجویز کردہ دوائی موجود ہو تو اسے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

 

ڈاکٹر سے کب رابطہ کریں

چاہے کتنا ہی معمولی دل کا درد ہو، ایسی صورت میں ڈاکٹر سے ضرور رجوع کریں۔ اس حالت میں سب سے پہلے ڈاکٹر اس تکلیف کی نوعیت کو دل کے محتلف ٹیسٹ لینے کے بعد جانے گا۔ اگر درد بہت زیادہ شدید ہو تو ڈاکٹر آپ کو ادویات کا استعمال کرنے کو بولے گا پر اگر یہ دورہ معمولی ہے تو ہو سکتا ہے کہ اپ کو ادویات کی ضرورت نہ پڑے اور ڈاکٹر آپ کو چند احتیاتی تدابیر بتا دے۔ اگر ادویات سے اس دورہ پر قابو نہ پایا جاۓ تو اس حالت میں ڈاکٹر آپریشن تجویز کرتا ہے جسے باى پاس سرجری کہا جاتا ہے۔

  

دل کے مریض کے لیے ضروری احتیاط

.1

زیادہ تھکا دینے والا کام کرنے سے پرہیز کریں۔

.2

ڈاکٹر کی ہدایت کردہ دوا کو بغیر ناغہ استعمال کریں اوراپنے ڈاکٹر کی ہدایات پر سختی سے عمل کریں۔

.3

جسم کو چست و توانا رکھنے کے لیے تھوڑی بہت ورزش بھی کریں جس سے جسم کو زیادہ تھکاوٹ نہ ہو۔

.4

کسی بھی قسم کا نشہ یا سگریٹ نوشی سے دور رہیں۔

.5

اپنے وزن کو زیادہ نہ بڑھنے دیں ورنہ دل کا دورہ پڑنے کے امکانات بڑھ سکتے ہیں۔

 

ان تمام عوامل پر قابو پا کر ہی اس بیماری سے چھٹکارہ حاصل کیا جا سکتا ہے۔

Read in Roman Urdu / Roman Hindi

Heart attack yani dil ka dora aik aisi takleef hai jis ma insaan ko saans lene ma dushwari paish ati ha aur is ko seene ma shadeed dard hota ha. Dil ke shariano ma hoon jam jata ha jis ki wajah se hoon ko nalio ki bandish ka samna karna parhta ha. Yeh dard mazkora shahs ke seene ma bae taraf opar wale hise ma hota ha. Dil ka dora amm tor par kisi bhi terha ki masrufiyat ke doran ho sakta ha.

DIL KA DORA KAISE HOTA HA

Shariano ma hoon ka lothra ban jane ki sorat ma heart attack yani dil ka dora parhta ha. Jab koi shahs es takleef se guzarta ha to isi waqt dore ke doran dil ki kamzor shariyan phat sakti ha. Nateejatan deegar maade aur cholesterol hoon ma shamil ho jate hain jis ki wajah se is shariyan ke phatne wali jagah par hoon jamna shuru ho jata ha jis se hoon ka dorania mukamal tor par dil ki shariano ma band ho jata ha. Heart attack se amoman dil ke pathe kamzor ho jate hain jis se hoon ka bahao kaafi darje mutasir hota ha.

DIL KA DORA KI ALAMAT

Bunyadi tor par Dil ka dora ki alamat mukhtalif hain jo mandarja zail batae ja rahe hain.
1. Bae bazu ms shidat se takleef ka hona.
2. Takleef jabre ma se hoti hue bae bazu ma mehsoos hona.
3. Seene ma jalan, boojh, ghutan ya tangi ka ehsas hona.
4. Nabz ki raftar achi terha mehsoos hona.

DIL KE DORAY KI TAKLEEF KA DORANIA

Dil ka dora agar kisi shahs ko aik dafa ho jae to phir ese dobara kisi bhe waqt dil ka dora aane ka khadsha mojood hota ha. Es marz ko ilaj ke zariye hatam kya ja sakta ha. Aksar ye bemari bilkul theek bhe ho jati ha lekin baaz oqat ilaj ke bawajod bhe is marz par qabo nahi paya ja sakta aur dil ke dore jari rehte hain.

HEART ATTACK AANE KI WAJAH

Dil ka dora aane ki wajah madarja zail ha.
1. Ziada mehnat wala kaam karne se es ki takleef ho sakti ha.
2. Shadeed sardi ki wajah se dil ka dora mumkin ho sakta ha.
3. Bohat ziyada ghusa karne, koi sadma aur bohat ziyada jazbati hona bhe es ki wajohat ma shaamil ha.

HEART ATTACK KA ILAJ - DIL KI TAKLEEF KE DORAN GHAR MA REH KAR KYA KAR SAKTE HAIN?

Agar dil ki takleef mehsos ho rahi ho to foran beth jana chaheay, kuch hi lamho ke baad dard ki shidat ma kami mehsoos ho gi aur aram aa jae ga. Takleef ma bohat ziyada jazbati nahi hona chaheay (har haal ma esay apni qefiat par qabo rakhe warna is takleef par qabo pana mushkil ho sakta ha). Jismani mehnat-o-mushaqat ke doran agar dil ka dora par jae to esi waqt kaam karna band kar den warna ziyada nuqsan bhe ho sakta ha. Heart attack ka ilaj foran mumkin banane ke liye agar ghar ma koi doctor ki tajweez karda dawai mojood ho to esay istemal kya ja sakta ha.

HEART SPECIALIST DOCTOR SE KAB RABITA KARE?

Chahe kitna hi mamooli dil ka dard ho, aesi sorat ma doctor se zaroor rujo kare. Es halat ma sab se pehle dil ka doctor es takleef ki noiyat ko dil ke mukhtalif test laine ke baad jane ga. Agar dard bohat ziyada shadeed ho to doctor aap ko adwiyat ka istemal karne ko bole ga par agar yeh dora mamooli ha to ho sakta ha ke aap ko adwiyaat ki zarorat na parhe aur heart specialist doctor aap ko chand ehtiati tadabeer bata de. Agar adwiyaat se dil ke dore par qabo na paya jae to es halat ma doctor operation tajweez karta hai jise bypass surgery kaha jata ha.

DIL KE MAREEZ KE LIYE TIPS - ZAROORI ETIYAT

1. Ziada thaka dene wala kaam karne se parhez kare.
2. Dil ke mahir doctor ki hadayat karda daawa ko bagher nagha istemal kare aur apne doctor ki hadayat par sahti se amal kare.
3. Jism ko chust-o-tawana rakhne ke liye thori bohat warzish bhe kare jis se jism ko ziada thakawat na ho.
4. Kisi bhe qisam ka nasha ya cigarette noshi se dor rahe.
5. Apne wazan ko ziada na bharne de warna dil ka dora parne ke imkanat barh satke hain.

En tamam awamil par qaboo pa kar hee es bimari se chutkara hasil kia ja sakta ha.