Asthma: Dama Ka Ilaj | Dama ki Alamat

Asthma - dama ka ilaj janeay. Dama ki alamat ke sath asthma ka perhez aur gharelu desi ilaj tafseel ke sath.

Asthma: Dama Ka Ilaj | Dama ki Alamat

ہمارے پھیپھ‍ڑوں میں بہت چھوٹی چھوٹی ٹیوبز موجود ہوتی ہیں۔ دمہ کی بیماری میں ان ٹیوبز سے ہوا کے گزرنے کا عمل متاثر ہوتا ہے۔ ہمارے جسم میں سانس لینے کی چھوٹی اور بڑی نالیاں موجود ہوتی ہیں۔ ان نالیوں میں سوجن کی وجہ سے ریشہ پیدا ہو جاتا ہے اور سانس لینے میں بہت مشکل ہو جاتی ہے۔ دمہ کی بیماری میں مبتلا شخص کو سانس باہر نکالنے میں بہت زیادہ دقت پیش آتی ہے۔ کارڈییک ایستھما ایک ایسی بیماری ہے جس کا دل کے ساتھ تعلق ہوتا ہے، اسے بھی دمہ کی ہی ایک قسم بولا جاتا ہے۔ اس مرض کے بہت سارے اسباب ہو سکتے ہیں جیسے مریض کے گردوں کا فیل ہو جانا، جسم میں حد سے زیادہ خون کی کمی اور دل کی بیماریاں وغیرہ شامل ہیں۔

دمہ کی علامات

.1
سانس لینے کی رفتار بہت زیادہ بڑھ جاتی ہے۔

.2

جب مریض سانس لیتا ہے تو اس کے سینے میں سیٹی کی آواز پیدا ہوتی ہے۔ پچاس فیصد دمہ کے مریضوں کو الرجی کی شکایت ہوتی ہے۔ یہ الرجی مختلف چیزوں سے ہو سکتی ہے جیسا کہ گردوغبار اور مختلف اقسام کے کھانے بھی شامل ہیں اور باقی پچاس فیصد مریضوں کو دمہ انفیکشن کی وجہ سے ہوتا ہے۔ دمہ کی بیماری مرد یا عورت کو عمر کے کسی بھی حصے میں ہو سکتی ہے۔ ایسے بچے جو بچپن میں ہی الرجی کے مریض ہوتے ہیں انہیں یہ بیماری جلدی لاحق ہو سکتی ہے۔

.3

جب مریض کھانسی کرتا ہے تو یہ کھانسی ریشے والی یعنی بلغمی ہوتی ہے۔

دمہ کا علاج ۔ دمہ کے مرض میں مبتلا شخص کو کیا کرنا چاہیۓ؟

اس مرض میں مبتلا شخص کو سپرے کی صورت میں ایک دوائی تجویز کی جاتی ہے جسے مریض اپنے منہ میں رکھ کر سانس اندر کی طرف کھینچتا ہے جس سے سانس لینے میں آسانی ہو جاتی ہے۔ اس سے ملتی جلتی دوائی مریض کو استعمال کروائیں۔ اگر اس دوا سے فَوراً آرام نہ ملے تو وقت ضائع کیے بغیر ہسپتال لے جانا چاہیۓ۔ ہو سکتا ہے کہ مریض کو انجیکشن یا آکسیجن کی ضرورت پیش آ جاۓ۔

دیر پا علاج کے لیے ضروری ہے کہ سانس کے ماہر ڈاکٹر سے رابطہ کیا جاۓ جس کے لیے درج ذیل باتوں پر غور کرنا ضروری ہے۔

؎

اس بات کا جاننا بہت ضروری ہے کہ ایسی کون سی اشیاء ہیں جن کی وجہ سے اس تکلیف سے دوچار ہونا پڑتا ہے۔ دھوا‌‌ں، مٹی، گردوغبار، گھر میں موجود پالتو جانور، پرندوں کے پروں سے بنے بستر وغیرہ، مریض کے کام کرنے کی ایسی جگہ جہاں بہت زیادہ دھواں یا پھر کپڑے کی فیکٹری وغیرہ ان سب چیزوں سے بھی الرجی کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ مریض کا خود کو ان سب چیزوں سے محفوظ رکھنا ہی سب سے بہترین علاج ہے۔

؎

دمہ کے مریض کو ایک کورس بھی کروایا جاتا ہے جسے حفاظتی ٹیکوں کا کورس کہا جاتا ہے۔ متاثرہ شخص کو مختلف قسم کی لیباٹری ٹیسٹ کروانے کے بعد ماہر ڈاکٹر اس کورس کی تجویز کرتا ہے۔

؎

ایک ایسی ویکسین جس کے لگوانے سے بھی مریض کو فائدہ حاصل ہو سکتا ہے اسے انفلوئنزا ویکسین کہتے ہیں۔

؎

مریض کو ایسے کام یا ورزش کرنی چاہیۓ جس سے سانس زیادہ نہ پھولے۔

؎

مریض کو موسم سرما میں احتیاط کرنی چاہیۓ اور سردی سے بچنا چاہیۓ۔

دمہ کا قدرتی گھریلو دیسی علاج


دمہ کا علاج صدیوں سے قدرتی طور پر ہوتا ہوا چلا آ رہا ہے۔ آج میڈیکل سائنس نے انگریزی ادویات کی ریسرچ میں انتھک محنت کی ہے جو تاریخ میں روشنی کی ماند ہے مگر اس کے ساتھ ساتھ دمہ کا دیسی علاج بھی اپنی مثال آپ ہے۔بہت لوگ اس بیماری کا شکار ہیں مگر چند ضرروی ہدایات پر گامزن رہنے سے اس بیماری سے چھٹکارہ حاصل کیا جا سکتا ہے۔


مندرجہ ذیل دمہ کا قدرتی گھریلوں علاج تفصیل سے بیان جا رہا ہے۔

.1

متوازن خوراک
شدید دمہ کے مریضوں کو اپنے کھانے پینے پر بہت توجہ کی ضرورت ہوتی ہے۔ دمہ کا علاج تب ہی ممکن ہو سکتا ہے جب اس بیماری کو کنٹرول میں لایا جا سکے جسے متوازن خوراک سے ممکن بنایا جا سکتا ہے۔ دمہ کے مریض اپنی خوراک میں زیادہ تر پھل اور سبزیاں شامل کریں جس سے کافی مقدار میں اینٹی آکسائیڈ، وٹامن سی اور وٹامن ایی کو حاصل کیا جا سکتا ہے جو نہ صرف مریض کے وزن کو کنٹرول میں لیتے ہیں بلکہ سانس کی نالیوں میں موجود سوزش کو بھی کم کرسکتے ہیں۔

.2

شہد
شہد کا استعمال کرنے سے دمہ میں کھانسی پر قابو پایا جا سکتا ہے اور گلے کی خراش کو ختم کیا جا سکتا ہے۔ شہد کو دن میں چار سے چھ چمچ استعمال کیا جا سکتا ہے یا پھر کسی بھی گرم مشروب کے اندر حسب ضرورت شہد کا استعمال ممکن ہے۔ شدید دمہ کے مریضوں کو شہد کا استعمال کرانے سے سانس لینے کےعمل میں فروانی ملتی ہے۔

.3

لہسن
لہسن سوزش کو کم کرنے کی خصوصیت رکھتا ہے۔ لہسن کے دیگر بہت سارے فائدے بھی ہیں۔ دمہ اصل میں سوزش والی بیماری ہے لہذا سانس کی نالیوں کی سوزش کو کم کرنے کے لیے لہسن سے دمہ کا علاج ممکن ہو سکتا ہے۔ دمہ کے مریض کو اپنی خوراک میں لہسن کا استعمال ہرگز نہیں بھولنا چاہیۓ۔

.4

ادرک
ادرک ایک ایسی بوٹی ہے جس کو استعمال کرنے سے شدید دمہ پر قابو پایا جا سکتا ہے۔ ادرک سوزش کی کمی کا باعث بنتی ہے۔ پھیھڑوں کو مکمل پھولانے اور سکڑنے کے نظام میں مدد دیتی ہے اور ہاضمے کو بہتر بناتی ہے۔

.5

جسمانی وزن میں کمی
زیادہ وزن ہونے کی صورت میں پھیھڑوں کے لیے کام کرنا مشکل رہتا ہے کیوں کہ ایسی صورت میں پھیھڑوں کو پھولنے میں کافی حد تک دشواری پیش آتی ہے۔ دمہ میں مبتلہ شخص کو اپنے وزن پر کنٹرول کرنا چاہیۓ تا کہ پھیھڑوں کا حجم بہتر ہو سکے۔

دمہ کااٹیک ۔ کیسے بچا جاۓ؟
مندرجہ ذیل نکات پرعمل درآمد کر کے دمہ کے اٹیک سے بچا جا سکتا ہے۔

؎

خود کو دھول سے پچائیں۔

؎
گھر کی دھول صاف کرتے ہوۓ یا گھر سے باہر چہرے پر ماسک لازمی استعمال کریں۔

؎
گھر میں موجود پالتو جانوروں کی خشکی سے خود کو بچائیں۔

؎
آب و ہوا میں نمی کے لیے ائیر کنڈیشنر کا استعمال کریں۔

؎
ایسی غذا جس سے آپ کو الرجی ہو اس سے پرہیز کریں۔

؎
گھر میں موجود قالین کو دھول سے پاک رکھیں جووکیوم کلینر کے استعمال سے ممکن ہے۔

Read in Roman Urdu / Roman Hindi

Hamare phephron me bohat choti choti tubes mojood hoti hain. Asthma ki bimari ma en tubes se hawa ke guzarne ka amal mutasir hota ha. Hamare jism me sans laine ki choti aur bari naalian mojood hoti hain. En nalion ma soojan ki wajah se resha paida ho jata ha aur saans laine ma bohat mushkil ho jati ha. Dama ki bimari ma mubtala shakhs ko saans bahar nikalne ma bohat ziyada diqat paish aati ha. Cardiac asthma aik aesi bimari hai jis ka dil ke sath taluq hota ha, ese bhe asthma ki he aik qisam bola jata ha. Es marz ke bohat sare asbaab ho sakte hain jaisa k mareez ke gurdon ka fail ho jana, jism ma had se ziyada khoon ki kami aur dil ki bimariyan waghera shamil hain.

DAMA KI ALAMAT

Dama ki alamat darj zail biyan ke ja rahe hain.


1. Saans lene ki raftar bohat ziyada barh jati ha.
2. Jab mareez saans laita ha to es ke seene ma seeti ki aawaz paida hoti ha. 50 percent asthma ke mareezon ko allergy ki shikayat hoti ha. Yeh allergy mukhtalif cheezon se ho sakti ha jaisa ke gard o guhbaar aur mukhtalif aqsam ke khane bhe shamil hain aur baqi 50 percent mareezon ko asthma infection ki wajah se hota ha. Asthma ki bimari mard ya orat ko umar ke kisi bhe hisse ma ho sakti ha. Aisay bachay jo bachpan ma he allergy ke mareez hote hain inhe asthma bimari jaldi lahaq ho sakti ha.
3. Jab mareez khansi karta ha to yeh khansi raishe wali yani balghami hoti ha.

DAMA KA ILAJ - ASTHMA KE MARZ MA MUBTALA SHAKHS KO KYA KARNA CHAHEAY?

Dama ma mubtala shakhs ko spray ki soorat mein aik dawai tajweez ki jati ha jise mareez apne mun ma rakh kar saans andar ki taraf khenchta ha jis se saans laine ma asani ho jati ha. Es se milti julti dawai mareez ko istimal karwaen jise asthma spray be kaha jata ha. Agar dama ki spray se foran aram na mile to waqt zaya kiye baghair mareez ko hospital le jana chaheay, ho sakta ha ke mareez ko injection ya oxygen ki zarorat paish aa jae.

Der-pa dama ke ilaj ke liye zaroori ha ke saans ke mahir doctor (Asthma specialist) se rabita kia jae jis ke liye darj zail baton par ghor karna zaroori hai .

1. Es baat ka jan,na bohat zaroori ha ke aesi kon si ashya hain jin ki wajah se dama ki takleef se dochar hona parhta ha. Dhuwan, mitti, gard o guhbaar, ghar ma mojood paltu janwar, parindon ke paron se banae bistar waghera, mareez ke kaam karne ki aisi jagah jahan bohat ziyada dhuwan ya phir kapre ki factory waghera en sab cheezon se bhi allergy ka samna karna par sakta ha. Mareez ka khud ko en sab cheezon se mehfooz rakhna he dama ka sab se behtareen ilaj ha.

2. Dama ke mareez ko aik course bhe karwaya jata ha jise hifazati tikon ka course kaha jata ha. Mutasirah shakhs ko mukhtalif qisam ki laboratory test karwane ke baad dama ka mahir doctor es course ki tajweez karta ha.

3. Aik aesi vaccine jis ke lagwane se bhe mareez ko faida hasil ho sakta ha, esay influenza vaccine kehte hain.

4. Mareez ko aise kaam ya warzish karni chaheay jis se saans ziyada na phoole.

5. Mareez ko mosam sarma ma ehtiyat karni chaheay aur sardi se bachna chaheay.

DAMA KA QUDARTI GHARELU DESI ILAJ

Dama ka desi ilaj sadiyon se qudarti tor par hota huwa chala aa raha ha. Aaj medical science ne angrezi adwiyaat ki research ma anthak mehnat ki ha jo tareekh ma roshni ki manid ha magar es ke sath sath dama ka desi ilaj bhi apni misal aap ha. Bohat log es bimari ka shikar hain magar chand zrori hadayat par gamzan rehne se dama ki bimari se chutkara hasil kia ja sakta ha.

Mandarja zail dama ka qudarti gharelu ilaj tafseel se bayan ja raha ha.


1. Mutawazan Khoraak
Shadeed dama ke mareezon ko apne khane peene par bohat tawajah ki zarorat hoti ha. Dama ka ilaj tab he mumkin ho sakta ha jab es bimari ko control ma laya ja sake jise mutawazan khorak se mumkin banaya ja sakta ha. Asthma ke mareez apni khoraak ma ziyada tar phal aur sabzian shamil karen jis se kaafi miqdaar ma anti oxide, vitamin C aur vitamin E ko hasil kia ja sakta ha jo na sirf mareez ke wazan ko control ma leite hain balke saans ki nalion ma mojood soozish ko bhe kam kar sakte hain.

2. Shehad
Shehad ka istimaal karne se dama ma hoti hue khansi par qaboo paya ja sakta ha aur gale ki kharash ko hatam kia ja sakta ha. Shehad ko din ma 4 se 6 chamach istimal kia ja sakta ha ya phir kisi bhe garam mashroob ke andar hasb e zaroorat shehad ka istimal mumkin hai. Shadeed dama ke mareezon ko shehad ka istimal karane se saans laine ke amal ma farawani milti ha.

3. Lahsun
Lahsun sozish ko kam karne ki hasusiyat rakhta ha. Lahsun ke deegar bohat sare faide bhe hain. Dama asal ma soozish wali bimari ha lehaza saans ki nalion ki sozish ko kam karne ke liye lahsun se dama ka ilaj mumkin ho sakta ha. Dama ke mareez ko apni horak ma lahsun ka istimal hargiz nahi bholna chahiay.

4. Adrak
Adrak aik aisi booti ha jis ko istimal karne se shadeed dama par qaboo paya ja sakta ha. Adrak soozish ki kami ka baees banti ha. Phephron ko mukamal pholane aur sukarne ke nizam ma madad deti ha aur hazme ko behtar banati ha.

5. Jismani wazan ma kami
Ziyada wazan hone ki sorat ma phihrhon ke liye kaam karna mushkil rehta hai kyun ke aisi soorat mein phephron ko pholne ma kaafi had tak dushwari paish ati ha. Dama ma mubtila shakhs ko apne wazan par control karna chaheay ta ke phephron ka hujam behtar ho sake.

DAMA KA ATTACK - KAISE BACHA JAE?

Kuch cheezon par amal daramad kar ke dama ke attack se bacha ja sakta ha jo nechay deay gae nukat ma batae ja rahe hain.

1. khud ko dhool se bachaen.
2. Ghar ki dhool saaf karte huay ya ghar se bahir chehre par mask lazmi istimal karen.
3. Ghar ma mojood paltu janwaron ki khushki se khud ko bachaen.
4. Abo-hawa ma nami ke liye air conditioner ka istemaal karen.
5. Aisi ghiza jis se ap ko allergy ho es se parhaiz karen.
6. Ghar ma mojood qaleen ko dhool se pak rakhen jo vacuum cleaner ke istimal se mumkin ha.