Peach (Aaru) Ke Fayde | Taseer, Maloomat

آڑو کے فائدے - Arru ke fawaid - آڑو کی تاثیر - Advantages of peach in Urdu

Peach (Aaru) Ke Fayde | Taseer,  Maloomat

شناخت

آڑو ایک درخت کا پھل ہے۔ یہ شیریں اور چاشنی دار ہوتا ہے۔ یہ تین وضع پر ہوتا ہے۔ ایک لمبا دوسرا چپٹا اور تیسرا گول۔ تینوں سبز قدرے سرخی دا رہوتے ہیں۔ آڑو کی گٹھلی کی مینگ کڑوی ہوتی ہے اور بعض قسم ایسی بھی ہوتی ہیں جن کی مینگ کڑوی نہیں ہوتی مگر بدمزگی سے حالی نہیں ہوتے۔ جس کی مینگ میٹھی ہوتی ہے یہ بہت شیریںدار ہوتا ہے اور رطوبت زیادہ ہوتی ہے۔

Aaru ke faide kia hain

آڑو میں زیادہ رطوبت کی وجہ سے کیڑے پیدا ہو جاتے ہیں ۔ اس کا پیڑ نمناک مقامات پر پایا جاتا ہے۔ یہ پھل جب خوب پک گیا ہو اور کافی دنوں سے پیڑ پر لگا رہا ہو تبھی بہت فائدہ مند ہوتا ہے۔ پھیکا آڑو قدرے قبض پیدا کرتا ہے۔ آڑو کا درخت معمولی اونچائی کا ہوتا ہے۔ اس کے پتے، پھول، گوند اور بیج تلخ ہوتے ہیں۔ آڑو کا پھول گلابی رنگ کا ہوتا ہے اور جب مکمل طور پر پک جاتا ہے تو اس کے تیار ہونے کے بعد ہی درخت سے پتے جھڑنا شروع ہو جاتے ہیں۔ پھول آنے کا موسم پوس سے بیساکھ تک ہے۔ پھول نہایت کثرت سے ہوتے ہیں۔ آڑو کے جڑ کی چھال رنگت کے کام آتی ہے۔ مزید اس کی گھٹلی کی مانگ سے ایک قسم کا تیل نکلتا ہے جو کڑوے بادام کے تیل کی طرح ہوتا ہے۔

مزاج

آڑو دوسرے درجہ میں سرد و تر ہے۔  

فوائد

آڑو پاخانہ میں نرمی لاتا ہے لیکن باوجود اس کے تھوڑا قابض ہے۔ اسی طرح سکھایا ہوا آڑو بھی قبض پیدا کرتا ہے۔ جریان مواد کو روکتا ہے اور قوت شہوانیہ کو حرارت میں لاتا ہے۔ گرم و خشک بخارات کو روکتا ہے اور پیاس کا غلبہ مٹاتا ہے۔ دماغ کی گرمی زائل کرتا ہے۔ ایسے مزاجوں میں جس میں سوداویت کی وجہ سے خشکی غالب ہو تری لاتا ہے۔ آڑو منہ میں خوشبو پیدا کرتا ہے۔ گرم و خشک مزاجوں میں بھوک اور اجتہاد اشتہات کو بڑھاتا ہے۔

benefits of peaches in Urdu

آڑو سے خون کم پیدا ہوتا ہے کیونکہ اس کی ماعیت کا ارضیت کے ساتھ امتزاج باخوبی نہیں ہوتا اسی وجہ سے یہ گرم و خشک مزاجوں کے بہت موافق ہے۔ پکا ہوا آڑو پہانا کھول کر لاتا ہے گرم معدہ کے مناسب ہے اور دھوپ سے جس کے جگر میں التہاب ہو گیا ہوں اسے نافع ہے۔ جس کی گٹھلی آسانی سے نکل جائے وہ جلد ہضم ہو جاتا ہے اس کے برعکس جس کی گٹھلی گودے میں خوب چپکی ہو اور رطوبت کم ہو وہ بہت غلیظ ہے۔ معدے میں دیر سے اترتا ہے جس کی وجہ سے دیر سے ہضم ہوتا ہے۔ مناسب یہ ہے کہ اس کو کھانے پر نہ کھائیں بلکہ کھانا کھانے سے پہلے کھائیں تاکہ میدے کی گرمی اس سے مل جائے اور جلد ہضم ہوجائے۔

sehat ke leay aaru ki ehmiat

حاصل کلام یہ ہے کہ آڑو گرم و خشک مزاج کے موافق اور سرد تر مزاج والوں کو مضر ہے ۔ آڑو گرم ریاخوں کو دفع کرتا ہے، لطافت بڑھاتا ہے اورخارش کو نافع ہے۔ آڑو کے دوگرام پھول اور گھٹلی کی مینگ اسقاط حمل کو نافع ہے۔ آڑو کی گٹھلی کی گری کا روغن کان کے درد اور بہرے پن کو مفید ہوتا ہے۔ اس کے پھل کا رس لگانے سے دانتوں کی جڑ کا مرض جاتارہتاہے۔ اس کے پتوں کا رس پینے سے جلد پر بنے دانےختم ہونا شروع جاتے ہیں۔

Read in roman Urdu / roman Hindi

Aaru Ki Maloomat:

                   Aaru aik darakht ka phal hai. Yeh shirein aur chashni-dar hota hai. Aaru teen wazah par hota hai, Aik lamba, dusra chipta aur teesra gol. Teeno sabz qadre surkhi dar hote hain. Aaru ke ghutli ki meeng karwi hoti hai aur baz qism aesi bhi hoti hain jin ki meeng karwi nahi hoti magar bad-mazgi se hali nahi hote. Jis aaru ki meeng meethi hoti hai yeh bohat meetha hota hai aur ratubat ziyadha hoti hai.

Aaru mai ziyadha ratubat ki waja se keere paida ho jate hain. Aaru ka poda namnak muqamat par paya jata hai. Yeh phal jab khub pak geya ho aur kafi dino se ped (Tree) par laga raha ho tabhi bohat faidha mand hota hai. Pheeka auro qadre qabz peda karta hai. Aaru ka darakht mamuli unchai ka hota hai. Es ke pate, phul, gond aur beej karway hote hain. Aaru ka phool gulabi rang ka hota hai aur jab mukkamal tor par pak jata hai to is ke tyar hone ke bad hi darakht se patte jharna shuru ho jate hain. Ped pe Phool aane ka mosam poos se besakh tak hai. Aaru ke ped pe phool nahayt kasrat se hote hain. Aaru ke jad ki chaal rangat ke kam aati hai. Mazeed aaru ke ghutli ki mang se ak qism ka tail nikalta hai jo kadwe badam ke tail ki tarah hota hai.

 

Aaru Ki Taseer

Aaru ki taseer sard or tar hai.

 

Aaru ke Fawaid

  • Aaru pakhana mai narmi lata hai lakin bawjood is ke thorda qabaz hai. Ise tarah sukhaya hua aaru bhi qabz paida karta hai.
  • Jaryan mawad ko rokta hai aur quwat shahwaniah ko hararat mai lata hai.
  • Garam o khushk mawad ko rokta hai aur piyas ka ghalba mitata hai.
  • Dimagh ki garmi zaael karta hai.
  • Aise mizajon mai jis mai sodaviyat ki waja se khushki ghalib ho tari lata hai.
  • Aaru muh mai khushbu paida karta hai.
  • Garm-o-khushk mizaajon mai bhuk ko badhata hai.
  • Aaru se khoon kam paida hota ise waja se yeh garm-o-khushk mizaj ke bohat muwafiq hai.
  • Paka hua aaru pahana khol kar lata hai, garm maidha ke munasib hai aur dhoop se jis ke jigar mai iltahab ho giya ho usy nafay hai.
  • Jis aaru ki ghutli asani se nikal jaye wo jald hazam ho jata hai is ke bar-aks jis ke ghutli gode mai khub chipki ho aur ratubat kam ho wo khane mai bohat ghaleez hai.
  • Munasib hai ke aaru ko khane par nah khaein balke khana khane se pahle khaein taa ke yeh khane se mil jaye aur jald hazam hojaye.
  • Aaru garm riyahon ko dafa karta hai, latafat badhata hai aur kharish ko nafay hai.
  • Aaru ke do garam phool aur ghutli ki meeng isqaat-e-hamal ko nafay hai.
  • Aaru ke ghutli ki giri ka roghan kan ke dard aur bahre pan ko mufeed hota hai.
  • Is ke phal ka ras lagane se daanton ki jad ka marz jata rahta hai .
  • Aaru ke paton ka ras peene se jild par bane dane(Acne) khatam hona shuru ho jate hain.

Hasal kalam yeh hai keh aaru garm o khushk mizaj ke muwafiq aur sard-o-tar mizaj walon ko mazar hai.